عورتوں سے متعلق چالیس احادیث
عورتوں سے متعلق چالیس احادیث

Aurton se motalliq masumin a.s. ki 40 ahadees

مترجم : عالیجناب مولانا  محمد وزیر حسن صاحب قبلہ،قم 

١ـ «پیغمبر اسلام صلی الله علیه و آله و سلم»:
خَیرُكُم خَیرُكُم لِنِسائِكُم وَ بَناتِكُم.
(مستدرک، ج ١٤، ص ٢٥٥)

تم میں سے بہترین وہ ہے، جو اپنی عورتوں اور بیٹیوں کے لئے بہترین سرپرست اور نگہبان ہوں.

Tum me behtaren wo hai, Jo apni aurton or betiyon k liye behtaren sarparast hon.

٢ـ «مولا امیرالمؤمنین علیه‌السلام»:
اَلله اَلله فی‌النِّساءِ و ماملَكَت اَیمانُكُم.
(نهج‌البلاغه، (وصیت) نامه ٤٧)

خدا سے ڈرو ان عورتوں کے سلسلے میں جو تمہاری سرپرستی میں ہوں ہیں.

Khuda se daro un aurton ky silsile me Jo tumhari sarparasti me hon.

٣ـ «امام محمدباقر علیه‌السلام»:
مَن حَسُنَ بِرُّهُ بِأَهلِهِ زیدَ فی‌عُمُرهِ.
(تحف‌العقول، ص ٣٠٥)

جو شخص اپنے اہل خانہ کے ساتھ اچھا سلوک کرے اس کی عمر زیادہ ہوتی ہے.

Jo shakhs Apne ahlo ayaal k saath Accha sulok Kare uski umr ziyada hoti hai.

٤ـ «امام جعفرصادق علیه‌السلام»:
اَكَثَرُ الخَیرِ فی‌النِّساءِ.
(وسائل، ج ١٤، ص ١١)

سب سے زیادہ خیر و نیکی عورتوں میں ہوتی ہے.

Sab se ziyada Khair o neki aurton me Hoti hai.

٥ـ «پیغمبر اسلام صلی‌الله علیه و آله و سلم»: الرَّجُلُ راعٍ عَلی اَهلِ بیتِهِ وَ كُلُّ راعٍ مُسؤُلٌ عَن رَعِیَّتِه.
(غوالی‌‌اللئالی، ج ١، ص ٢٥٥)

مرد اپنے اہل و عیال کا سرپرست اور نگہبان ہے، اور ہر سرپرست اپنی رعایا کا مسؤل ہے.

Mard Apne ahlo ayaal Ka sarparast or nigahbaan hai, or har sarparast apni reaaya Ka zimmedar hai.

٦ـ «امام جعفرصادق علیه‌السلام»:
اِنَّما الَمرأَةُ لُعبَةٌ مَنِ اتَّخَذَها فَلا یٌضَیِّعُها.
(وسائل، ج ١٤، ص ١١٩)

بے شک مرد کے لئے عورت، دلبر اور گڑیا کی مانند ہے، جو اس کو اپنائے، وہ اس کو ضائع نہ ہونے دے (اپنے عفت و ناموس کی طرح اس کی حفاظت کرے).

Beshak mard k liye aurat dilbar or guriya k Jaise hai, Jo Usko apnaye, WO Usko zaaya na hone de(apni iffat o namus ki Tarah us ki hefazat kare)

٧ـ «مولا امیرالمؤمنین علیه‌السلام»:
إنَّ المَرأَةَ ریحانَةٌ وَ لَیسَتْ بِقَهرَمانَةٍ، فَدارِها علی كُلِّ حالٍ وَ أَحسِنِ الصُّحَبَةَ لَها لِیَصفُو عَیشُكَ.
(وسائل، ج ١٤، ص ١٢)

عورت، ایک ریحانه(پھول) ہے نه کہ امور کا متولیّ اور سرپرست. تم ہر حال میں اس کے ساتھ خوش رفتاری سے پیش آؤ، اور اپنی زندگی کو خوشگوار بناؤ.

 aurat ek raihana hai na kamoñ Ka muawalli or sarparast, tum har haal me us k saath khus raftaari se pesh aaao or apni Zindagi ko khusgawar Banao.

٨ـ «امام زین‌العابدین علیه‌السلام»:
و امّا حَقُّ الزَّوجَةِ فَأَنْ تَعلَمَ أَنَّ الله عَزّوَجَلّ جَعَلَها لَكَ سَكَناً و اُنساً فَتَعلَمَ أَنَّ ذلِكَ نِعمةً مِنَ اللهِ عَلَیكَ فَتُكرِمُها وَ تَرفِقُ بِها.
(مکارم‌الاخلاق، ص ٤٢٠)

اور عورت کا حق، جان لو کہ خدا نے اس کو تمہارے لیے باعث آرام و سکون بنایا ہے،وہ اللہ کی نعمت ہے، اس کی عزت و احترام کرو، اور اس کے ساتھ اچھا سلوک کرو.

Or àurat Ka haq Jan lo ki Khuda ne Usko Tumhare liye baise aaram o sukon banaya hai or or Allah ki nemat hai, uski izzat o ehteram Karo, or us k saath Accha soluk Karo.

٩ـ «پیغمبر اسلام صلی‌الله علیه و آله و سلم»: خِدمَةُ العِیالِ كفّارَةٌ لِلكبائِرِ وَ تُطفِیءُ غَضَبَ الرَّبِّ، وَ مُهوُر الحورِ العینِ وَ تَزیدُ فی‌الحسَناتِ وَالدَّرَجاتِ.
(جامع‌السعادات، ج ٢، ص ١٤١)

اهل و عیال کی خدمت، گناهان کبیره کا کفارہ اور پروردگار کے غضب کو ٹھنڈا کرتا ہے۔
حور العین کا مهر، اور انسان کی نیکی اور درجات کو بڑھاتا ہے.

Ahlo ayaal ki Khidmat, gunahane kabira or Parwardigar k Ghazab ko thanda Karta hai.
Hurane Bahisht Ka maher, or insan ki neki or darajat ko barhata hai.

١٠ـ «مولا امیرالمؤمنین علیه‌السلام»:
صِیانَةُ المَرأَةِ أنعَمُ لِحالِها وَ أَدَومُ لِجمالِها.
(فهرست ‌غرر، ص ٣٨٠)

عورت کا حجاب اس کی حفاظت، اس کے آرام و سکون کے لیے مناسب ہے جو اس کے حسن و جمال کو باقی رکھتا ہے۔

Aurat Ka hijab or uski hefazat, us k aaraam o sokun k liye munasib hai jo us k husn o Jamal ko baqi rakhta hai.

١١ـ «پیغمبر اسلام صلی‌الله علیه و آله و سلم»:
لَیسَ لِامْرَأَةٍ خَطَرٌ لِصالِحَتهِنَّ وَ لا لِطالِحَتِهِنَّ: امّا صالِحَتُهُنَّ فَلَیسَ لَها خَطَرُ الذَّهَبِ والفِضَّةِ وَ امّا طالِحَتُهُنَّ فَلَیسَ لَها خَطَرُ الَتُرابِ، وَالتُّرابُ خَیرٌ مِنها!
(دعائم‌الاسلام، ص ١٩٥)

کسی بھی نیک یا بری عورت کو پرکھا نہیں جاسکتا:‌کسی نیک عورت کو سونے اور چاندی سے اس کی قیمت نہیں لگائی جاسکتی،
اور بری عورت کو مٹی سے، اس لیے کہ مٹی بھی اس سے کہیں بہتر ہوتی ہے۔

Kisi bhi Nek ya buri aurat ko parkha Nahi ja sakta: Kisi Nek aurat ko sone or chandi se us ki qimat Nahi lagaai ja sakti, or buri aurat ko mitti se, is liye k mitti usse kahin behtar Hoti hai!

١٢ـ «مولا امیرالمؤمنین علیه‌السلام»:
لاتُغالوا فی مُهورِالنِّساءِ فَیكُونُ عداوَةً.
(بحار، ج ١٠٣، ص ٣٥١)
عورت کا مہر زیادہ نہ کرو اس لیے کہ وہ عداوت اور دشمنی کا باعث ہے.

Aurat Ka Maher ziyadah na Karo is liye ki woh adawat or dushmani Ka sabab hai.

١٣ـ «پیغمبر اسلام صلی‌الله علیه و آله و سلم»: إنَّ مِن یُمنِ المَرأةِ تَیسیرُ خُطبَتِها وَ تیسیر صداقھا۔
(نهج‌الفصاحه، ج ١، ص ١٨٨)

ایک عورت کا یُمن اور خوش‌قدم ہونا، (شادی کی آسانی اور سهولت) اس کے مہر کے کم ہونے میں ہے.

Ek aurat Ka yumn or khus qadam Hona, ( shadi ki aasani or sahulat) us k Maher k Kam hone me hai.

١٤ـ «پیغمبر اسلام صلی‌الله علیه و آله و سلم»:
اَعظمُ النِّساءِ بَركَةً أقلُّهُنَّ مَؤُنَةً.
(مستدرک، ج ١٤، ص ١٦٥)

عورتوں کی بزرگی، اس میں ہے کہ ان کا خرچ اور توقع کم سے کم ہو.

Aurton ki buzurgi, is me hai ki un ka kharch or tawaqqo Kam se Kam ho.

١٥ـ «مولا امیرالمؤمنین علیه‌السلام»:
لاتُحمِّلوا النّساءَ اَثقالَكُم وَاسْتَغنُوا عَنْهُنَّ ما استَطعتُم.
(فهرست غرر، ص ٣٨٠)

اپنے کاموں کی سنگینی اپنی عورتوں پر مت ڈالو، ایسے موقع میں ان سے بے نیاز رہو۔

Apne kamon ki sangini apni aurtoñ par mat dalo, aise mauqe me unse beniyaz raho.

١٦ـ «پیغمبر اسلام صلی‌الله علیه و آله و سلم»:
اِیّاكُم وَ خَضراءَ الدِّمَن. قیلَ یا رسولَ اللهُ و ما خضراءُ الدِّمَن؟ قالَ المَرأةُ الحَسناءُ فی‌ مَنبَتِ السُّوءِ.
(وسائل، ج ١٤، ص ١٩)

وہ سبزہ جو گھور اور کھنڈر میں اگتا ہے، اس سے بچو، عرض ہوا، یارسول اللہ وہ کیا ہے؟ فرمایا: پست خاندان میں پرورش پانے والی، خوبصورت عورت.

Wo sabza Jo ghur or khandar me ugta hai usse bacho, arz hua, ya rasulullah wo kya hai? Farmaya: past khandaan me parwarish pane wali khubsurat aurat.

١٧ـ «پیغمبر اسلام صلی‌الله علیه و آله و سلم»:
إنَّ المَرأَةَ اِذا حَمَلتَ كانَ لَها مِنَ الأَجرِ كَمَن جاهَدَ بِنفسِهِ و مالِهِ فی سَبیل اللهِ عَزّوجلّ.
(بحار، ج ١٠٣، ص ٢٥٢.)
جب عورت حاملہ ہوتی ہے تو اس کا اجر، اس شخص کے جیسے ہے جس نے راہ خدا میں،جان اور مال سے جہاد کیا ہو.

Jab aurat hamla Hoti hai to uska ajr us shakhs k Jaise hai jis ne rahe Khuda me, Jan or maal se jehad Kiya ho.

١٨ـ «مولا امیرالمؤمنین علیه‌السلام»:
خیرُالنِّساءِ اَلوَلودُالوَدوُد.
(مواعظ عددیه، ص ٢٢)
عورتوں میں بهترین عورت وہ ہے، جو زیادہ بچہ دینے والی اور مہربان ہو.

Aurton me behtareen aurat wo hai Jo ziyadah baccha dene wali or Maherban ho.

١٩ـ «امام جعفرصادق علیه‌السلام»:
جهادُالمرأَةِ أَنْ تصبِرَ علی ماتری مِن أذی زَوجِها وَ غَیرَتِه.(الفقیه، ج ٢، ص ١٤١)

عورت کا جہاد یہ ہیکہ اپنے شوہر اور اس کی غیرت سے جو اذیت اور تکلیف ہو، اس پر صبر کرے۔

Aurat Ka jehad ye hai ki Apne shauhar or uski ghairat se Jo aziyat or taklif ho, us par sabr kare.

٢٠ـ «پیغمبر اسلام صلی‌الله علیه و آله و سلم»:
ایُّما اِمرَأَةٍ اَعانَت زَوجها عَلیَ الحَجِّ وَ الجِهادِ أوطَلَبِ العِلمِ اعطاهَا اللهُ مِنَ الثّوابِ ما یُعطی اِمرَأةَ ایّوبَ علیه‌السلام. (مكارم الاخلاق، ص ٢٠١)

جو عورت اپنے شوہر کی مدد؛ حج، جہاد اور تحصیل علم میں کرے خدا اس کو حضرت ایوب کی زوجہ کا اجر و ثواب عطا کرے گا.

Jo aurat Apne shauhar ki madad haj, jehad or tahseel e ilm me kare to Khuda us ko hazrat ayyob ki zauja Ka ajr o sawab dega.

٢١ـ «امام جعفرصادق علیه‌السلام»:
مَن صَبَر عَلی سؤءِ خُلقِ اِمرَأَتِهِ اَعطاهُ اللهُ مِنَ الأَجرِ ما أَعطی أَیُّوبَ علیه‌السلام.
(مکارم‌الاخلاق، ص ٢١٥)

جو شخص اپنی عورت کی بد اخلاقی اور بدسلوکی کو برداشت کرے، خدا اس کو ایوب نبی کا اجر، عطا کرے گا.

Jo shakhs apni aurat ki bad akhlaqi or bad suluki ko bardasht kare, Khuda usko ayyob Nabi Ka ajr dega.

٢٢ـ «پیغمبر اسلام صلی‌الله علیه و آله و سلم»:
مَن صَبَرَتْ عَلی سُوءِ خُلقِ زَوجِها اَعطاهاَ اللهُ مِثلَ ثوابِ آسِیَةَ بنتِ مُزاحم.
(مکارم‌الاخلاق، ص ٢١٤)

عورت اپنے شوہر کی بد اخلاقی پر صبر کرے تو خدا اس کو آسیہ بنت مزاحم (زوجہ فرعون) کا اجر عطا کرے گا.

Aurat Apne shauhar ki bad akhlaqi pr sabr kare to Khuda us ko aasiya binte muzahim (zauja e firaun) Ka ajr ata kare ga.

٢٣ـ «پیغمبر اسلام صلی‌الله علیه و آله و سلم»:
ما مِن عَمَلٍ أَحَبَّ اِلیَ اللهِ وَ الی رَسولِهِ (ص) مِنَ الایمانِ باللهِ وَ الرِّفقِ بالعِیالِ.
(الشِهاب فی‌الحِکَم و الآداب، ص ٥٦)
خدا و رسول(ص) کے نزدیک، خدا پر ایمان اور اپنے اہل وعیال کے ساتھ خوش اخلاقی سے زیادہ محبوب، کوئی عمل نہیں ہے.

Khuda o Rasul k nazdeek, Khuda o Rasul pr iman or Apne ahlo ayaal k saath khus akhlaqi se ziyadah mahbob koi Amal Nahi hai.

٢٤ـ «امام جعفرصادق علیه‌السلام»:
أَیُّما اِمَرأَةٍ لَم تَرفِقْ بِزَوجها وَ حَمَلَتهُ عَلی ما لایَقدِرُ عَلیهِ و مالایُطیقُ لَم یَقبَلِ اللهُ مِنها حَسنةً وَ تلقیَ اللهَ وَ هُو عَلیها غَضبانُ.
(وسائل، ج ١٤، ص ١٥٤)

جو عورت اپنے شوہر کی حالت کا لحاظ نہیں کرتی، یعنی جو چیز اس کی طاقت اور توانائی سے باہر ہو، اس کے باوجود اس کو مجبور کرے تو خدا اس کا کوئی عمل قبول نہیں کرتا اور اس سے ناراض ہوتا ہے.

Jo aurat Apne shauhar ki halat Ka lehaz Nahi Karti, Yani Jo chiz uski taqat or tawanaai se bahar ho، us k bawajod Usko Majbor kare to Khuda uska koi Amal qabol nahi karta or usse naraz hota hai.

٢٥ـ «پیغمبر اسلام صلی‌الله علیه و آله و سلم»:
هَیبَةُ الرّجُلِ لِزَوجَتِهِ تَزیدُ فی عِفَّتِها.
(مواعظ صدوق، ص ٥٥)
مرد کی ہیبت، زوجہ پر اس کی عزت و پاکدامنی کے اضافہ کا باعث ہوتا ہے.

Mard ki haibat zauja pr uski izzat o pakdamni k izafe Ka sabab hota hai.

٢٦ـ «مولا امیرالمؤمنین علیه‌السلام»:
خیارُ خِصالِ النِّساءِ شِرارُ خِصالِ الرِّجالِ: الزَّهْوُ وَ الجُبْنُ وَالبُخلُ.
(مواعظ‌عددیه، ص ٨٨)

عورتوں کی بہترین اور مردوں کی بدترین خصلت: تکبر و بزدلی، بخل اور کنجوسی.

Aurton ki behtaren or mardon ki badtareen khaslat: takabbur o buzdili,or knjusi.

٢٧ـ «پیغمبر اسلام صلی‌الله علیه و آله و سلم»:
لاتُؤَدیِّ المَرأَةُ حَقَّ اللهِ عزّوجلّ حتِّی تُؤَدِّیَ حَقَّ زَوجِها.
(مستدرک، ج ١٤، ص ٢٦٥)

جب تک عورت، اپنے شوہر کا حق ادا نہ کرے، خدا کے حق کو بھی ادا نہیں کرے گی.

Jab tak aurat Apne shauhar Ka haq Ada na kare, Khuda k haq ko bhi Ada nahi karegi.

٢٨ـ «پیغمبر اسلام صلی‌الله علیه و آله و سلم»:
الحیاءُ حَسَنٌ وَ هُوَ مِنَ النِّساءِ أَحسَنُ وَ اِمرَأَةٌ لاحیاءَ لَها كَطَعامٍ لامِلحَ لَه.
(مواعظ عددیّه، ص ١٨٠)

شرم و حیا اچھی اور پسندیده چیز ہے، لیکن عورتوں کے لئے بہت زیادہ، اگر عورت کے اندر شرم و حیا نہ ہو تو اس کی مثال اس کھانے کے جیسی ہے جس کھانے میں نمک نہ ہو۔

Sharm o haya acchi or Nek chiz hai, lekin aurton k liye bahut Ziyada, agar aurat k andar sharm o haya na ho to us ki misal us Khane k jaisi hai jis Khane me namak na ho.

٢٩ـ «مولا امیرالمؤمنین علیه‌السلام»:
لایَخلُوَنَّ رَجُلٌ بِاِمرأَةٍ فَإنَّ ثالِثُهُما الشَّیطانُ!
(مستدرک، ج ١٤، ص ٢٦٦)

کوئی مرد کسی نامحرم عورت کے ساتھ، اکیلے نہ رہے ورنہ (یقینا) تیسرا شخص شیطان ہوگا۔

koi mard kisi namadr aurat ke sath akele na rahe warna (yaqinan) tisra shakhs shaitan hoga.

٣٠ـ «امام جعفرصادق علیه‌السلام»:
إنَّ اللهَ تَبارَكَ و تعالی غَیورٌ یُحبُّ كُلَّ غَیور وَلِغَیرَتِهِ حَرَّمَ الفَواحِشَ ظاهِرَها و باطِنَها.
(فروع کافی، ج ٥، ص ٥٣٥)

بے شک اللہ تعالی غیور ہے اور غیرت مند انسان کو اس کی غیرتمندی کی خاطر دوست رکھتا ہے۔ اور اللہ گالی گلوج کے ظاہر اور باطن دونوں کو حرام قرار دیا ہے۔

Beshak Allah taala ghayur hai or ghairatmand insan ko dost rakhta hai,uski ghairatmandi ki khatir, or Allah Gali galoj k zahir or batin dono ko haraam qarar Deta hai.

٣١ـ «پیغمبر اسلام صلی‌الله علیه و آله و سلم»:
مَن كانَ لَهُ اِمرأَةٌ تُؤذیهِ لَم یَقبَلِ اللهُ صَلاتَها وَ لاحَسَنَةً مِن عَمَلِها حَتّی تُعینَهُ وَ تُرضِیَهِ.
(وسائل، ج ١٤، ص ١١٦)

کسی کی عورت اپنے شوہر کو اذیت و آزار پہنچائے، تو خدا اس وقت تک اس کی نماز اور کوئی نیکی قبول نہیں کرتا جب تک کہ وہ اپنے شوہر کی مدد اور اس کو راضی نہ کرے.

Kisi ki aurat Apne shauhar Ko aziyat o azaar pahunchaye, to Khuda us waqt tak uski namaz or koi neki qabul nahi karta jab tak ki wo Apne shauhar ki madad or usko raazi na kare.

٣٢ـ «امام جعفرصادق علیه‌السلام»:
لاصِیامَ لِامْرَأَةٍ ناشِزَةٍ حَتی تَتوُبَ.
(دعائم‌الاسلام، ص ٢٦٨)

ناشزه و نافرمان عورت جب تک توبہ نہ کرے، اس کا روزه‌ قبول نہیں.

Nasheza or na farman aurat jab tak Tauba na kare uska roza qabul nahi hota.

٣٣ـ «پیغمبر اسلام صلی‌الله علیه و آله و سلم»:
اِتّقوُا النِّساءَ فإنّ أَنَّ أَوّلَ فِتنَةَ بَنی اسرائیل كانَ فی‌النّساءِ.
(نهج‌البلاغه، ج ١، ص ١٠٨)

عورتوں کے فتنوں سے بچو، اس لئے کہ بنی اسرائیل کا پہلا فتنہ اور اختلاف عورت کے ذریعہ وجود میں آیا.

Aurton k fitnon se bcho is liye ki Bani israil ka pahla fitna or ikhtelaf aurat k zariye hua.

٣٤ـ «پیغمبر اسلام صلی‌الله علیه و آله و سلم»:
شَرُّ الأَشیاءِ اَلمَرأَةُ السُّوءِ.
(مستدرک، ج ١٤، ص ١٦٥)

بدترین چیز، بری عورت اور اس کی برائی ہے.

Bad tareen chiz buri aurat or us ki buraai hai.

٣٥ـ «امام جعفرصادق علیه‌السلام»:
اَیُّما اِمرَأَةٍ قالَت لِزَوجِها ما رَأیتُ مِنكَ خَیراً قَطُّ، فَقَد حَبِطَ عَملُها۔
(مکارم‌الاخلاق، ص ٢١٥)

جب کوئی عورت اپنے شوہر سے کہے: میں نے تم میں کوئی اچھائی نہیں پائی، تو اس کے تمام نیک اعمال ختم ہو جاتے ہیں۔

Jab koi aurat Apne shauhar se kahe: Mai ne tum me koi acchai Nahi paai, to uske tamam aamaal e Nek katm ho jate hain.

٣٦ـ «پیغمبر اسلام صلی‌الله علیه و آله و سلم»:
ما أخافُ عَلی اُمَّتی فِتنةً أخوفَ مِنَ النِّساءِ والخَمرِ
(یوم‌الخلاص، ص ٣١٨)

مجھے اپنی امت میں دو فتنوں سے زیادہ کسی چیز کا ڈر نہیں ہے:
۱. عورت
۲. شراب

Mujhe apni ummat me 2 fitnon se ziyada Kisi chiz Ka dar nahi hai:
1. Aurat
2. Sharab

٣٧ـ «پیغمبر اسلام صلی‌الله علیه و آله و سلم»:
خِیرُ ما یَكنِزُ المَرءُ، اَلمَرأةُ الصّالِحةُ، اذا نَظَرَ اِلیها سَرَّتهُ و اِذا أمَرَها اَطاعَتهُ و اِذا غابَ عنها حَفِظَتهُ.
(نهج‌الفصاحه، ج ١، ص ٨٦)

مرد کا بہترین خزانہ، اس کی نیک اور پارسا عورت ہے، جب وہ اس کو دیکھے تو مرد کو خوش کردے اور اس سے کوئی چیز چاہے تو وہ اس کی اطاعت کرے، اور اس کی نا موجودگی میں اس کی چیزوں(امانت)کی حفاظت کرے.

Mard Ka behtareen khazana, uski nek or parsa aurat hai, jab wo usko dekhe to mard ko khus karde, or jab usse koi chiz chahe to uski itaat kare, or uski na maujudgi me us ki chizon (amanat) ki hefazat kare.

٣٨ـ «پیغمبر اسلام صلی‌الله علیه و آله و سلم»:
إمرأَةٌ خََیِّبةٌ أجرُها كَأجرِ مَریَمَ اِبنَةِ عِمران علیهاالسلام.
(مواعظ‌ عددّیه، ص ١٧٦)

با عفت عورت جس کی شادی نہ ہوئی ہو اس کا اجر و ثواب خدا کے نزدیک حضرت مریم بنت عمران علیها‌السلام کے جیسا ہوگا.

Ba iffat aurat jis ki shadi na hui ho uska ajr o sawab, Khuda k nazdeek hazrat Maryam bint e imran k jaisa Hoga.

٣٩ـ «پیغمبر اسلام صلی‌الله علیه و آله و سلم»:
لایَحِلُّ لِلمَرأةِ أَنْ تُكلِّفَ زَوجَها فَوقَ طاقَتِهِ وَ لاتَشكوهُ الی أَحَدٍ مِن خَلقِ الله عزَّوجَّل لاقَریبٍ ولابَعیدٍ.
(مستدرک، ج ١٤، ص ٢٤٢)

عورت کے لئے جائز نہیں ہے اپنے شوھر سے، اس کی طاقت سے زیادہ کسی چیز کا مطالبہ کرے، اور کبھی کسی مخلوق خدا سے، دور کا ہو یا نزدیک کا، اس سے اس کی شکایت کرے.

Aurat k liye jayez Nahi hai Apne shauhar se us ki taqat se ziyada Kisi chiz Ka mutaleba kare or Kabhi Kisi makhluq e Khuda se, dur Ka ho ya nazdeek Ka, us se us ki shikayat kare.

٤٠ـ «پیغمبر اسلام صلی‌الله علیه و آله و سلم»:
أیُّما اِمرَأةٍ خَرَجَت مِن بَیتِ زوجِها بِغَیر اِذنِهِ لَعَنها كُلُّ شَیءٍ طَلَعَت عَلیهِ الشَّمسُ والقَمَرُ الی أَن یرضی عنها زَوجُها.
(مستدرک، ج ١٤، ص ٢٥٨)

جو عورت اپنے شوہر کی اجازت کے بغیر گھر سے باہر قدم نکالے، تمام موجودات جن پر سورج اور چاند کی روشنائی ہوتی ہے، اس وقت تک، اس پر لعنت کرتے ہیں جب تک کہ اس کا شوہر اس سے راضی نہ ہو جائے.

Jo aurat Apne shauhar ki ijazat k beghair ghar se bahar qadam nekale, tamam maujodat Jin pr Suraj or Chand ki raushnai hoti hai, us waqt tak us pr lanat karte hain jab tak ki uska shauhar us se raazi na ho Jaye.

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں